Loading...
Read Article

Molana Tariq Jameel History in Urdu

Notification Image

مولانا طارق جمیل صاحب  1953 میں ملتان کے قریب تلمبہ میں پیدا ہوئے۔ مولانا طارق جمیل کے والد کا تعلق مسلم راجپوت برادری سے تھا ، وہ ایک ماہر زراعت تھا اوراپنے مقامی علاقے میں ایک قابل احترام شخص تھا۔میاں چنوں شہر میں مولانا طارق جمیل کی پرورش ہوئی۔  مولانا طارق جمیل کی انتھک کوششوں سے سعید انور ، انضمام الحق ، محمد یوسف ، ثقلین مشتاق ، مشتاق احمد اور سلیم ملک جیسی عظیم ترین پاکستانی کرکٹروں کی زندگی میں حقیقی اسلامی اقدار آئیں۔ اسلام کی طرف متاثر کن تحریک کے بعد سے ہی وہ جنید جمشید کا مرکزی نمونہ بھی رہے ہیں۔

تعلیم: گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور سے پری میڈیکل  کی تعلیم مکمل کی اور بعد میں ڈاکٹر بننے کے لیے کنگ ایڈورڈ میڈیکل کالج میں داخلہ لے لیا۔ لیکن روحانیت کی طرف جھکاؤ نے جلد ہی انہیں اسلامی تعلیم کی طرف متوجہ کر دیا۔ اس کے بعد انہوں نے جامعہ عربیہ ، رائے ونڈ (لاہور) سے اسلامی تعلیم حاصل کی جہاں انہوں نے قرآن ، حدیث ، شریعت ، تصوف ، منطق اور فقہ کی تعلیم حاصل کی۔

اسلام کی طرف منتقلی:مولانا طارق جمیل  کو ہاسٹل کی لائف میں ان کے ایک دوست جو کہ کالج وقت کا تھا دین کی دعوت دی اور یہ دوست تبلیغی جماعت سے تعلق رکھتا تھا۔

یہ دوست  لوگوں کو اسلامی اقدار اور اصولوں پر عمل پیرا ہونے اور ان کی روزمرہ کی زندگی کو عملی جامہ پہنانے کی ترغیب دیتے ہوئے باقاعدگی سے لیکچر اور تقریر کرتا رہا۔ وہ غیر سیاسی ، عدم تشدد ، فرقہ وارانہ اسلام پر زور دیتا رہا۔

وجہ شہرت:اپنے خطبات اور آسان اور معمولی طرز زندگی کی وجہ سے ، طارق جمیل پوری دنیا کے مسلمانوں  کو احترام کا حکم دیتا ہے۔ ان کے پاس انسانی زندگی اور اس کی تخلیق کے مقصد کی وضاحت کرنے کا ایک آسان ، فصاحت اور مخصوص انداز ہے اور اکثر اس کی دلیل کی تائید کے لئے سائنسی مثالوں کا استعمال کیا جاتا ہے۔ انہوں نے معاشرے میں ہر قسم کی جماعتوں کو لیکچر دیئے ہیں جن میں حاضرین ڈاکٹر ، انجینئر ، پروفیسر ، تاجر ، جاگیردار ، سرکاری اہلکار ، ٹی وی / فلمی فنکار ، وزراء / سیاست دان اور کھیلوں کی مشہور شخصیات ہیں۔پاکستان کے فیصل آباد میں مدرسہ چلانے کے علاوہ ، مولانا طارق نے دنیا بھر میں ہزاروں لیکچر دیئے ہیں۔

تبلیغی جماعت: تبلیغی جماعت ایک سیاسی مشنری تحریک (اسلام پھیلانے والی تحریک)  ہے جس کی بنیاد محمد الیاس الکندھلوی نے 1927 میں ہندوستان میں رکھی تھی۔ اس کی دیوبندی تحریک سے غیر رسمی وابستگی ہے لیکن زیادہ اہم مقصدر عام لوگوں تک اسلام کا پیغام پہنچانا ہے۔ برصغیر کے مختلف ممالک نے اپنا پیغام دنیا کے تقریبا ہر ملک اور لاکھوں میں اس کی پیروی کرنے والوں تک پہنچایا ہے۔ پاکستان اور بنگلہ دیش میں اس کی سالانہ اجتماعات ہوتی ہیں جن کی تعداد لاکھوں میں ہے۔




Articles List